Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Nafraton Ke Andheron Mein | نفرتوں کے اندھیروں میں

( 2 Votes )

Zamana jisay thokaron se mar chuka woh tere bahon me jiya hi
Bay sahara bay kason ko khon-e-jigar de ker ashk oron ka piya hi

Apni arzoun umangon ko daba ker zakham ghairon ka Tu ne saha hi
Dobti sisakti insaniyat ko jenay ka hosla Tu ne diya hi
Nafraton ke andheron mein mohabbaton ka ik diya hi

Tujhe zamanay ki nafraton se kya lena Tu to pak daman hi
Masihai mein doobi rooh tere pakezgi ki zamin hi

Tere sadgi mein rangeeni hi Tera ujla perahan hi
Ikhlaqiyat ka daras zamanay ko apni adaon se Tu ne diya hi
Nafraton ke andheron mein mohabbaton ka ik diya hi

Tujhe gham hi zamanay ka tere dukhon ka koi madawa nahi
Tu ne lalkara hi mayosiat ka jhoota tera koi daawa nahi

Is paishay mein zindagi ganwa ker bhi Tujhe koi pichtawa nahi
Zaman yeh khushi kya kam hi keh tera naam bhi masihaon mein liya hi
Nafraton ke andheron mein mohabbaton ka ik diya hi

زمانہ جسے ٹھوکروں سے مار چکا وہ تیری بانہوں میں جیا ہے
بے سہارا بے کسوں کو خون ِجگر دے کر اشک اوروں کا پیا ہے

اپنی آرزووں امنگوں کو دبا کر ذخم غیروں کا تو نے سہا ہے
ڈوبتی سسکتی انسانیت کو جینے کا حوصلہ تو نے دیا ہے
نفرتوں کے اندھیروں میں محبتوں کا اک دیا ہے

تجھے زمانے کی نفرتوں سے کیا لینا تو تو پاک دامن ہے
مسیحائی میں ڈوبی روح تیری پاکیزگی کی ضامن ہے

تیری سادگی میں رنگینی ہے تیرا اجلا پیراہن ہے
اخلاقیات کا درس ذمانے کو اپنی اداؤں سے تو نے دیا ہے
نفرتوں کے اندھیروں میں محبتوں کا اک دیا ہے

تجھے غم ہے ذمانے کا تیرے دکھوں کا کوئی مداوا نہیں
تو نے للکارا ہے مایوسیت کا جھوٹا تیرا کوئی دعویٰ نہیں

اس پیشے میں ذندگی گنوا کر بھی تجھے کوئی پچھتاوا نہیں
ذمان یہ خوشی کیا کم ہے کہ نام تیرا بھی مسیحائوں میں لیا ہے
نفرتوں کے اندھیروں میں محبتوں کا اک دیا ہے

© Zaman John 2008

Add comment


Security code
Refresh

Login Form