Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Pedaish | پیدائش

( 3 Votes )

ؑKhuda esa likh jaon mein Yesu ki shan mein
Dil ko rahat milay sakoon milay har aan mein

Yesu ki pedaish kesi ajeeb tarah hui thi dekho
Sitarah chamka asman pe zameen pe manawar khurli thi dekho

Asmani lashkar ki garoh ga rahi thi hamd-o-sana
Majoosi laye thay tohfon mein mur, luban aur sona

Gadariyon ne bhi pesh kia tha bhairhon ka nazrana
Mubarik ho mubarik naveed ai alam-e-bala per hossana

Jalali Khuda ka Beta aj jahan mein aya hi
Herodis ka bura hal hua aur dil ghabraya hi

Badshahon ka badshah yahodah ka woh hai babar
Tora jis ne dunya ke sardar ka gharoor-o-takabur

Ab ruswai hi ruswai hi shetan ki zamanay mein
Dekho to nijat ayi hi Israel ke ghranay mein

Aman ka Shehzada hi har dukh dard ki dawa bana
Rastay zakhmon ke liye woh shafi hi marham bana

Dunya ka Khuda se phir se kiya hi milan
Beech ki deewar tori aur hat gaya hi chilman

Sotay mein jagtay mein gata hon geet sada
Mere Malik mujhe bakhsh muaf ker de mere Khuda

Muafi ka jo dar Tu ne khola hi aj yahan
Kahan dunya ka Malik Bethlehem ki charni kahan

Yeh ilahi intezam hai qoul pooray huay nabiyon ke
Youhana ne kaha qabil kahan tasmah Uska kholnay ke

Tariq teray kya majal tere kya hesiyat tw kidhar
Bachay ga bas wohi jo aye ga Yesu idher

کچھ ایسا لکھ جاؤں میں یسوع کی شان میں
دل کو راحت ملے سکون ملے ہر آن میں

یسوع کی پیدأش کیسی عجیب طرح ہوئی تھی دیکھو
ستارہ چمکا آسمان پہ زمین پہ منور کھرلی تھی دیکھو

آسمانی لشکر کی گروہ گا رہی تھی حمدوثنا
مجوسی لائے تھے تحفوں میں مر، لبان اور سونا

گڈریوں نے بھی پیش کیا تھا بھیڑوں کا نذرانہ
مبارک ہو مبارک نوید آئی عالمِ بالا پر ہوشعنا

جلالی خُدا کا بیٹا آج جہاں میں آیا ہے
ہیرودیس کا برا حال ہوا اور دل گھبرایا ہے

بادشاہوں کا بادشاہ یہودہ کا وہ ہے ببر
توڑا جس نے دنیا کے سردار کا غرور و تکبر

اب رسوائی ہی رسوائی ہے شیطان کی زمانے میں
دیکھو تو نجات آئی ہے اسرائیل کے گھرانےمیں

امن کا شہزادہ ہے ہر دکھ درد کی دوا بنا
رستےزخموں کے لئے وہ شافی ہے مرہم بنا

دنیا کا خدا سے پھر سے کیا ہے ملن
بیچ کی دیوار توڑی اور ہٹ گیا ہے چلمن

سوتے میں جاگتے میں گاتا ہوں گیت سدا
میرے مالک مجھے بخش معاف کر دے میرے خدا

معافی کا جو در تو نے کھولا ہے آج یہاں
کہاں دنیا کا مالک بیت الحم کی چرنی کہاں

یہ الہیٰ انتظام ہے قول پورے ہوئے نبیوں کے
یوحنا کے کہا قابل کہاں تسمہ اسکا کھولنے کے

طارق تیری کیا مجال تیری کیا حیثیت تو کدھر
بجے گا بس وہی جو آئے گا یسوع کے ادھر

© 2011 Samson Tariq

Add comment


Security code
Refresh

Login Form