Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Ibn-e-Maryam | ابنِ مریم

( 2 Votes )

Afsoos sad afsoos ghinaonay jim kernay walon per

Khulay phirtay hain inhein koi pochnay wala nahi

 

Akhrat ka dar nahi dheeli rassi bhi daraz hai inki

Jan jinki khataron mein unko koi pochnay wala nahi

 

Parhay hain gali koochon mein hazaron aur lakhon mein

Bhookon, tangdaston, lawarison ko koi pochnay wala nahi

 

Aj har taraf nafsa-nafsi ka daur hi magar

Sadmon, takleefon, dukhon mein koi pochnay wala nahi

 

Fironiat ke taqazay bhi kuch hoty hogay zaroor

Zilaton, aziaton, jan soziyon mein koi pochnay wala nahi

 

Ibn-e-Maryam hi har dukh dard ki dawa hai sun lo

Ous ke siva koi zakhmon peh marham rakhnay wala nahi


افسوس صد افسوس گھناؤنے جُرم کرنے والوں پر
کھُلے پھِرتے ہیں اِنھیں کوئی پُوچھنے والا نہیں

 


آخرت کا ڈر نہیں ڈھیِلی رسی بھی دراز ہے اِن کی
جان جِنکی خطروں میں اِنکو کوئی پُوچھنے والا نہیں

 


پڑے ہیں گلی کُوچوں میں ہزاروں اور لاکھوں میں
بھُوکوں، تنگدستوں، لاوارثوں کوکوئی پُوچھنے والا نہیں

 


آج ہر طرف نفسا نفسی کا دور ہے! مگر
صدموں، تکلِیفوں، دُکھوں میں کوئی پُوچھنے والا نہیں


فِرعُونِیت کے تقاضے بھی کُچھ ہوتے ہوں گے ضرُور
ذِلتوں، اذِیتوں، جان سوزِیوں میں کوئی پُوچھنے والا نہیں

 


اِبنِ مریم ہی ہر دُکھ درد کی دوا ہے سُن لو
اُس کے سِوا کوئی زخموں پہ مرحم رکھنے والا نہیں

© 2012 Samson Tariq

Add comment


Security code
Refresh

Login Form