Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Zindah | زندہ

( 3 Votes )

Ufq peh zehan ke tera khayal zinda hain
Tere saleeb ka faiz-e-kamaal zinda hain

Mata jaan ka diya Tu ne jab se nazranah
Mere zameen peh har ek mah-o-sal zindah hain

Sar-e-saleeb jo ubhri thi roshni ban ker
Mohabbateon ke wohi ek misaal zindah hain

Yeh qainaat to kab ki ghubar ho jati
Tere hi dam se yeh aks-e-kamaal zindah hain

Hasaar maslahat-e-waqt hai keh mein chup hon
Yeh manta hon lahu ka sawal zindah hain

Hai nan-o-meh mein Tere khoon aur badan ka saroor
Jabhi to paon mein mere dhamal zinda hain

Zamen peh zulam ki shab ki humein nahi parwah
Keh tere zakham badan ka halaal zindah hein

Jo Tere Baap ne bakhsha malal-e-ishq Tujhe
Har ek dil mein wohi ek malal zindah hai

Nigah se agar ojhal hai to kya gham hi
Tere khalos-e-wafa ka mual zindah hai

Dayar-e- gheir mein jeena mahal ho kesay
Dil-e-tabah mein shuq-e-wisal zindah hai

Kaha jo kun to Amar zindagi thi har janab
Yeh harf ka wohi tu har su jamal zindah hai

اُفق پہ ذہن کے تیرا خیال زندہ ہیں
تیری صلیب کا فیضِ کمال زندہ ہیں

متاعِ جاں کا دیا تُونے جب سے نذرانہ
میری زمیں پہ ہر اک ماہ و سال زندہ ہیں

سرِ صلیب جو اُبھری تھی روشنی بن کر
محبتوں کی وہی اِک مثال زندہ ہیں

یہ کائنات تو کب کی غُبار ہو جاتی
تیرے ہی دم سے یہ عکسِ کمال زندہ ہیں

حصارِ مصلحتِ وقت ہے کہ میں چُپ ہوں
یہ مانتا ہوں لہو کا سوال زندہ ہیں

ہے نان و مہ میں تیرے خون اور بدن کا سرور
جبھی تو پاﺅں میں میرے دھمال زندہ ہیں

زمیں پہ ظلم کی شب کی ہمیں نہیں پرواہ
کہ ترے زخمِ بدن کا ہلال زندہ ہیں

جو تیرے باپ نے بخشا ملالِ عشق تجھے
ہر ایک دل میں وہی اک ملال زندہ ہے

نگاہ سے اگر اوجھل ہے تو کیا غم ہے
تیرے خلوصِ وفا کا معال زندہ ہے

دیارِ غیر میں جینا محال ہو کیسے
دلِ تباہ میں شوقِ وصال زندہ ہے

کہا جو کُن تو امر زندگی تھی ہر جانب
یہ حرف کا ہی تو ہر سو جمال زندہ ہے

© Pervez Amar

Login Form