Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Zahoor-E-Tajasam | ظہُور ِ تجسم

( 2 Votes )

Mere dil ko jis ki talash thi jo mujhe bhi apna bana gaya
Mere justaju ke jawab mein woh apni charni mein agaya

Mere pas akay woh Nasiri meray dard-o-gham ko mita gaya
Mere zindagi ko sakoon mila mujhe phir se jeena sikha gaya

Woh shafeeq hi, woh raheem hi, woh ghafoor hi, woh kareem hi
Mere sab khataon ko bakhsh ke mere dil mein akay sama gaya

Sar-e-asman hon rahatein, ho zameen peh sulah aur atshi
Yeh tha geet aman ka, pyar ka, jo garoh farishton ka ga gaya

Woh hi jan-e-Mariyam Nasiri, woh hi shan-e-Yousaf Daoodi
Woh falak se charni mein agaya, woh zameen ko sharash bana gaya

Woh hi ap fidya guzar bhi, wohi fidya ehal-e-jahaan ka hi
Hmein sonay, mur aur loban ka jo raz tha batla gaya

Tu bhi aye Khayal ho shadman, hi khushi mein dooba hua jahan
Jo tha ibn-e-haq woh bana bashar, woh bashar ko haq se mila gaya

میرے دل کو جس کی تلاش تھی جو مجھے بھی اپنا بنا گیا
مِری جستجو کے جواب میں وہ آپ چرنی میں آگیا

میرے پاس آکے وہ ناصری مِرے درد و غم کو مِٹا گیا
مِری زندگی کو سکُوں مِلا مُجھے پھر سے جینا سکھا گیا

وُہ شفیق ہے، وہ رحیم ہے، وہ غفُور ہے، وہ کریم ہے
میرے سب خطائوں کو بخش کے میرے دل میں آکے سما گیا

سر ِ آسمان ہوں راحتیں، ہو زمین پہ صُلح اور آشتی
یہ تھا گیت امن کا، پیار کا، جو گروہ فرشتوں کا گا گیا

وہ ہے جان ِ مریم ناصری، وہ ہے شان ِ یوسف داودی
وہ فلک سے چرنی میں آگیا، وہ زمین کو شرش بنا گیا

وہ ہے آپ فدیہ گُزار بھی، وہی فدیہ اہل ِ جہاں کا ہے
ہمیں سونے، مُر اور لوبان کا جو راز تھا بتلا گیا

تُو بھی اے خیالؔ ہو شادماں، ہے خوشی میں ڈوبا ہُوا جہاں
جو تھا ابن ِ حق وہ بنا بشر، وہ بشر کو حق سے ملا گیا

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Add comment


Security code
Refresh

Login Form