Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Patras ka Hal | پطرس کا حال

( 1 Vote )

Nasiri ne murh ke dekha soye huay Patras ek bar
Tobah ke ansu lagty behnay umad ker zar zar

Us nigah wapsin ne senah chalni ker diya
Ek bijli se giri behnay lagi ashkon ke ghar

Muragh ke awaz ne Patras se janay kya kaha
Apnay daway yad ker ke hogaya woh sharm-sar

Sath marnay ke liye jo har ghari tayar tha
Samnay londi ke munkar ho gaya woh dawedar

Dil nidamat se bhara tha roh mein thi kashmakash
Jan shikanjay mein phansi thi chin gaya sabar-o-karar

Sath rehta hi kahan saya andheri rat mein
Nasiri pakray gaye to sab huay apnay farar

Aj sachay dil se kar lay tu bhi tobah aye Khayal
Calvary peh fidya denay wala dita hi pukaar
--------

ناصری نے مُڑ کے دیکھا سوئے پطرس ایک بار
توبہ کے آنسُو لگے بہنے اُمڈ کر زار زار

اُس نِگاہِ واپسیں نے سینہ چھلنی کر دیا
ایکھ بجلی سی گری بہنے لگی اشکوں کی دھار

مُرغ کی آواز نے پطرس سے جانے کیا کہا
اپنے دعوے یاد کر کے ہوگیا وہ شرمسار

ساتھ مرنے کے لیے جو ہر گھڑی تیار تھا
سامنے لونڈی کے مُنکر ہوگیا وہ دعویدار

دِل ندامت سے بھرا تھا رُوح میں تھی کشمکش
جاں شکنجے میں پھنسی تھی چھِن گیا صبروقرار

ساتھ رہتا ہے کہاں سایہ اندھیری رات میں
ناصری پکٹرے گئے تو سب ہوئے اپنے فرار

آج سچّے دِل سے کرلے تُو بھی توبہ اے خیالؔ
کلوری پر فِدیہ دینے والا دیتا ہے پُکار

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Add comment


Security code
Refresh

Login Form