Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Noor-E-Tajasam | نُورِ تجسم

( 2 Votes )

Masiha dobti kashti laganay par aye hain
Bachanay asion ko asion kay yar aye hain

Elahi noor ki kirnon se charni hogayi roshan
Mohabbat ki liye shama meray gham-khwar aye hain

Karam aur adal ko markooz apni zat mein ker ke
Gunah gaon ki khatir woh uthanay dar aye hain

Sitaray ke nazar anay se unko mi gayi charni
Majoosi lay ke nazrein shah ke darbar aye hain

Farishton se khushi ka geet sun ker khof ke maray
Tajub se woh charwahay paye dedar aye hain

Zamanay ko halmi ka jo hai mafhom samjhanay
Meray makhdoom ban ke aj khidmatgar aye hain

Kanwari pak Mariyam per hui jis ki ajeeb bakhshishi
Mubarik god mein uski woh shahkar aye hain

Sunao sab ko khush khabri barhao dosti se
Mujasam ho keh ibn-e-haq sar-e-bazar aye hain

Khushi se tum mubarik bar do sab ko Khayal
Khatain bakhshnay ko sab ki woh sarkar aye hain

مسیحا ڈوبتی کشتی لگانے پار آئے ہیں
بچانے عاصیوں کو عاصیوں کے یار آئے ہیں

الہی نور کی کرنوں سے چرنی ہوگئی روشن
مُحبت کی لیے شمع مرے غمخوار آئے ہیں

کرم اور عدل کو مرکُوز اپنی ذات میں کر کے
گُناگاروں کی خاطر وُہ اُٹھانے دار آئے ہیں

ستارے کے نظر آنے سے اُن کو مل گئی چرنی
مجُوسی لے کے نذریں شاہ کے دربار آئے ہیں

فرشتوں سے خوشی کا گیت سُن کر خوف کے مارے
تعجب سے وہ چرواہے پئے دیدار آئے ہیں

زمانے کو حلیمی کا جو ہے مفہوم سمجھانے
میرے مخدُوم بن کے آج خدمگار آئے ہیں

کنواری پاک مریم پر ہوئی جس کی عجیب بخشش
مُبارک گود میں اُسکی وہی شاہکار آئے ہیں

سُنائو سب کو خُوشخبری بڑھائو دوستی سے
مُجسم ہوکے ابن ِ حق سر ِ بازار آئے ہیں

خُوشی سے تم مبارک باد دو سب کو خیالؔ
خطائیں بخشنے کو سب کی وہ سرکار آئے ہیں

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Add comment


Security code
Refresh

Login Form