Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Khud Inkari | خُود انکاری

( 2 Votes )

Nachez heon mein esavi farman ke siva
Bekar hon Injeel ki pehchan ke siva

Bar-e-gunah to sab mera Tu ne utha liya
Ab kya uthaon mein Tere ehsan ke siva

Apni khudhi ko chor ke aur nazar utha
Agay bhi ek rutbah hi insan ke siva

Hi jan tere jism mein mehman ki tarah
Is ghar mein aur hi bhi kya mehman ke siva

Hi arzi basera tera qafas-e-azri
Do gaz zameen bhi nap kabhi shan ke siva

Pehchanty hon phal se agar darakht ko
Insan ko kahein gay kya nadan ke siva

Mumkin nahi keh hosakay hasil kabhi Khayal
Fazal-e-Khuda humein faqat emaan ke siva

ناچیز ہوں میں عیسوی فرمان کے سِوا
بیکار ہوں انجیل کی پہچان کے سوا

بار ِ گناہ تو سب مرا تُو نے اٹھا لیا
اب کیا اُٹھائوں میں تیرے احسان کے سوا

اپنی خودی کو چھوڑ کے اور نظر اٹھا
آگے بھی ایک رُتبہ ہے انسان کے سوا

ہے جان تیرے جسم میں مہمان کی طرح
اِس گھر میں اور ہے بھی کیا مہمان کے سوا

ہے عارضی بسیرا ترا قفس ِ عضری
دو گز زمین بھی ناپ کبھی شان کے سوا

پہچانتے ہوں پھل سے اگر ہر درخت کو
انسان کو کہیں گے کیا نادان کے سوا

ممکن نہیں کہ ہوسکے حاصل کبھی خیالؔ
فضل ِ خُدا ہمیں فقط ایمان کے سوا

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Add comment


Security code
Refresh

Login Form