Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Ibn-E-Maryam | ابن ِ مریم

( 1 Vote )

Shakal o soorat se to hum lagty sabhi insan hain
Kuch magar esay hain insan jo fakat haiwain hain

Calvary se arahi hi aye gunahgaro sada
Baap unko muaf ker day yeh baray nadan hain

Murdon mein se ibn-e-Maryam tesry din jee uthay
Un ke zindah honay peh sab aj tak hairan hain

Ghar humara asman peh hi sakoonat ke liye
Is jahan ko kiya karain hum to yehan mehman hain

Us ne bakhshi maghfarat hi aur abdi zindagi
Ibn-e-Maryam ke humaray sar peh yeh ehsan hain

Aiyenay mein ab humein dhundhala se ata hi nazar
Ibn-e-Maryam ke saharay kal baray imkan hain

Hogaya hi Calvary peh tera bhi fidya Khayal
Sab ki khatir ibn-e-Maryam ho chukay qurban hain

شکل و صورت سے تو ہم لگتے سبھی انسان ہیں
کچھ مگر ایسے ہیں انساں جو فقط حیواں ہیں

کلوری سے آرہی ہے اے گُنہگارو صدا
باپ انکو معاف کردے یہ بٹرے نادان ہیں

مُردوں میں سے ابن ِ مریم تیسرے دن جی اُٹھے
اُن کے زندہ ہونے پہ سب آج تک حیران ہیں

گھر ہمارا آسمان پہ ہے سکُونت کیلئے
اِس جہاں کو کیا کریں ہم تو یہاں مہمان ہیں

اُس نے بخشی مغفرت ہے اور ابدی زندگی
ابن ِ مریم کے ہمارے سر پہ یہ احسان ہیں

آئینے میں اب ہمیں دُھندلا سا آتا ہے نظر
ابن ِ مریم کے سہارے کل بٹرے امکان ہیں

ہوگیا ہے کلوری پہ تیرا بھی فدیہ خیالؔ
سب کی خاطر ابن ِ مریم ہو چُکے قُربان ہیں

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Comments  

 
0 #1 Samson Tariq 2012-06-03 15:21
اِبنِ مریم

افسوس صد افسوس گھناؤنے جُرم کرنے والوں پر
کھُلے پھِرتے ہیں اِنھیں کوئی پُوچھنے والا نہیں
آخرت کا ڈر نہیں ڈھیِلی رسی بھی دراز ہے اِن کی
جان جِنکی خطروں میں اِنکو کوئی پُوچھنے والا نہیں
پڑے ہیں گلی کُوچوں میں ہزاروں اور لاکھوں میں
بھُوکوں، تنگدستوں، لاوارثوں کوکوئی پُوچھنے والا نہیں
آج ہر طرف نفسا نفسی کا دور ہے! مگر
صدموں، تکلِیفوں، دُکھوں میں کوئی پُوچھنے والا نہیں
فِرعُونِیت کے تقاضے بھی کُچھ ہوتے ہوں گے ضرُور
ذِلتوں، اذِیتوں، جان سوزِیوں میں کوئی پُوچھنے والا نہیں
اِبنِ مریم ہی ہر دُکھ درد کی دوا ہے سُن لو
اُس کے سِوا کوئی زخموں پہ مرحم رکھنے والا نہیں

سیمسن طارق
Quote
 

Add comment


Security code
Refresh

Login Form