Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Eik Paigham | ایک پیغام

( 1 Vote )

Paish ker tobah ka hadya sarnagon iqrar mein
Warna khami hi rahya gi tere istaghfar mein

Zindagi ki mushkilon ka khof mat ker hamsafar
Peda un se pukhtagi hogi tere kirdar mein

Tu naqeeb-e-zindagi hi gamazan reh bay khatar
Kuch kam anay na paye tez pa raftar mein

Koi Musa se kahay keh zabt se kuch kam le
Bat jo israr mein hi kahan izhar mein

Nasiri ke pyar ki khoobi to hum se pochiye
Reham ka mafhoom kya hi Esvi esar mein

Asmanon ki bulandi per bhatka chorh de
Woh to rehta hi shikastah roh ke iqrar mein

Har ke bhi hoslah mat harna tu aye Khayal
Bhao ghat-tay barhtay rehty hain bharay bazar mein

پیش کر تَوبہ کا ہدیہ سرنگوں اقرار میں
ورنہ خامی ہی رہے گی تیرے استغفار میں

زندگی کی مُشکلوں کا خوف مت کر ہمسفر
پیدا اِن سے پختگی ہوگی ترے کردار میں

تُو نقیبِ زندگی ہے گامزن رہ بے خطر
کُچھ کم آنے نہ پائے تیز پا رفتار میں

کوئی مُوسی‘ سے کہے کہ ضبط سے کُچھ کام لے
بات جو اِسرار میں ہے کہاں اظہار میں

ناصری کے پیار کی خُوبی تو ہم سے پُوچھئے
رحم کا مفہُوم کیا ہے عیسوی ایثار میں

آسمانوں کی بُلندگی پر بھٹکنا چھوڑ دے
وہ تو رہتا ہے شِکستہ رُوح کے اقرار میں

ہار کے بھی حوصلہ مت ہارنا تُو اے خیالؔ
بھائو گھٹتے بھٹرھتے رہتے ہیں بھرے بازار میں

© 2003 Khayal Hoshiarpuri

Add comment


Security code
Refresh

Login Form