Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Tareekh Ki Sachai | تاریخ کی سچاءی

( 2 Votes )

Manzil mein jo ker jaye na khud sar se uthay ga
Rehbar ya ikhlas ke pekar se uthay ga

Us rah ko dhonday se bhi manzil na milay gi
Jo dhoop nikal anay per bistar se uthayga

Hum log andheron me ujalon ki tarah hain
Yeh jazbah kalesiaon ke ghar ghar se uthay ga

Jab apnay Masiha peh hai musrf ka bharosah
Ek roz woh iflaas ke mehwar se uthay ga

Ban jayga dukhon ka Masiha wohi jazbah
Jo sahib-e-injeel ke ander se uthayga

Aye sahibo, mazlomo, aseeron ka madadgar
Moosa ki tarah shehar sitamgar se uthayga

Aghosh mein ghaflat ki jo girjay mein parha hai
Woh padri halat ki thokar se uthay ga

Tazaein-e-gulistan ke lagata hai jo naray
Har roz naya fitnah usi ghar se uthay ga

Injeel ka tabsheer ka aur war-e-wafa ka
Ta umar yeh nah haar shar sar se uthayga

منزل میں جو کر جائے نہ خود سر سے اُٹھے گا
رہبر یا اخلاص کے پیکر سے اُٹھے گا

اِس راہی کو ڈھونڈے سے بھی منزل نہ ملے گی
جو دھوپ نکل آنے پہ بستر سے اُٹھے گا

ہم لوگ اندھیروں میں اُجالوں کی طرح ہیں
یہ جذبہ کلیسیاﺅں کے گھر گھر سے اُٹھے گا

جب اپنے مسیحا پہ ہے مسرف کا بھروسہ
اک روز وہ افلاس کے محور سے اُٹھے گا

بن جائے گا دُکھیوں کا مسیحا وہی جذبہ
جو صاحبِ اِنجیل کے اندر سے اُٹھے گا

اے صاحبو مظلوموں، اسیروں کا مددگار
موسیٰ کی طرح شہر ستمگر سے اُٹھے گا

آغوش میں غفلت کی جو گرجے میں پٹرا ہے
وہ پادری حالات کی ٹھوکر سے اُٹھے گا

تزئینِ گُلستاں کے لگاتا ہے جو نعرے
ہر روز نیا فتنہ اُسی گھر سے اُٹھے گا

اِنجیل کا تبشیر کا اور وارِ وفا کا
تا عُمر یہ نہ ہار شر سَر سے اُٹھے گا

© Greffin Jones Shara

Login Form