Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Jis Dagar Peh | جس ڈگر پہ

( 5 Votes )

Jis dagar peh
Sab ba sal, hanstay gatay, mkuskuratay
Chal rahay hain
Khawab mein aur jagtay mein
Hosh mein aur bay khudi mein
Maazi ke dhundhlakon mien chupkay
Haal ki bahon mein dabkay
Ghalat fehmi ka hath thamay
Chupkay. Chupkay. Dheray dheray
Bay khabar anay walay kal se
Muskuratay chal rahay hain
Jis dagar peh
Ous dagar ki inteha mein
Bay sabati nah janay kyoun?
Ous dagar peh
bhairh ki manind jhutkaye
Sar ko apnay
Khawab mein aur jagtay mein
Hosh mein or bay khudi mein
Anay walay kal ke sooraj ki
roshni mein
Chupkay. Chupkay. Larkharatay
Chal rahay hain. Chal rahay hain!!

جس ڈگر پہ
سال با سال، ہنستے گاتے، مسکراتے
چل رہے ہیں
خواب میں اور جاگتے میں
ہوش میں اور بےخودی میں
ماضی کے دنھندلکوں میں چھُپکے
حال کی بانہوں میں دبکے
غلط فہمی کا ہاتھ تھامے
چُپکے۔ چُپکے۔ دھیرے دھیرے
بے خبر آنے والے کل سے
مسکراتے چل رہے ہیں
جس ڈگر پہ
اُس ڈگر کی انتہا میں
بےثباتی کی لاش دیکھو
تو پھر نہ جانے کیوں؟
اُس ڈگر پہ
بھیڑ کی مانند جھُٹکائے
سر کو اپنے
خواب میں اور جاگتے میں
ہوش میں اور بے خودی میں
آنے والے کل کے سورج کی
روشنی میں
چُپکے۔ چُپکے۔ لٹرکھڑاتے
چل رہے ہیں۔ چل رہے ہیں!!

© Perez Sultan 2008

Add comment


Security code
Refresh

Login Form