Masihi Shayari - PROMOTING MASIHI SHAYARI
Download Urdu Font

Andheron Mein | اندھیروں میں

( 3 Votes )

Mein to thehra andheron mein mara hua ik jism
Jis ke charon aur andhera
Nah umeed keh hoga savera
Tashnah aur tanha hai jevan
Abtar na koi khushk hi sehra
Bojh gunah ka itna bhari
Zeest chalay hi hari hari
Jism gunahon ki atish mein hi
Jalta jaye ajab angarah
Reham ki bondein taras ki barkha
Yahowah ne mienh barsaya
Apnay lakht-e-jigar ko kesay
Andheron mein us ne utara
Zaat-e-aqdas ajeeb hi ari
Barrah jis ne khata uthali
Ik ik roh o tan ki khatir
Bhari sooli us ne uthali
Dushman-e-jaan ne korhay maray
dast-o-ba mein keel utaray
Sar ki zeenat sang-e-khara
Pasli mein nezah bhi mara
Dard bhara yeh manzir sara
Farsh-o-bashar ki mukti khatir
Lahu baha keh diya isharah
Andheron ki gor mein murdah
Jan-o-tan ko Us ne pukara
Us ne bhulaye Us ne mitaye
Khataein sari rog humaray
Us jevan ne mehar-o-wafa ka
Mukti ka phir bhed tha paya
Ab yeh afsha hum pe hua hi
Mukti daata jeevan dhara
Wohi apna sedha rasta
Us ke behtay lahu ke eiwaz
Hum ne abdi shehar hai jana
Abad talak phir qurab-e-Masih mein
Humein sada phir waheen hi rehna
Kesa hoga manzir sara
Roh-o-tan yeh soch keh sara
Khushi se hai mamoor humara
Khushi se hi mamoor humara

میں تو ٹھہرا اندھیاروں میں مارا ہو ا اک جسم
جس کے چاروں اور اندھیرا
نہ اُمید کہ ہوگا سویرا
تشنہ اور تنہا ہے جیون
ابَر نہ کوئی خشک ہے صحرا
بوجھ گناہ کا اتنا بھاری
زیست چلے ہے ہاری ہاری
جسم گناہوں کی آتش میں ہے
جلتا جائے عجب انگارہ
رحم کی بوندیں ترس کی برکھا
یہواہ نے مینہ برسایا
اپنے لخت ِ جگر کو کیسے
اندھیاروں میں اُس نے اُتارا
ذات ِ اقدس عیب سے عاری
برّہ جس نے خطا اُٹھالی
اک اک روح و تن کی خاطر
بھاری سُولی اُس نے اُٹھالی
دشمن ِ جاں نے کوڑے مارے
دست و پا میں کیل اُتارے
سَر کی زینت سنگ ِ خارا
پسلی میں نیزہ بھی مارا
درد بھرا یہ منظر سارا
فرد و بشر کی مُکتی خا طر
لہو بہا کے دیا اشارہ
اندھیاروں کی گور میں مُردہ
جان و تن کو اُس نے پکارا
اُس نے بُھلائے اُس نے مٹائے
خطائیں ساری روگ ہمارے
اس جیون نے مہرو وفا کا
مُکتی کا پھر بھید تھا پایا
اب یہ افشا ہم پہ ہوا ہے
مُکتی داتا جیون دھارا
وہی اپنا سیدھا رستہ
اُس کے بہتے لہو کے عوض
ہم نے ابدی شہر ہے جانا
ابد تلک پھر قُر ب ِ مسیح میں
ہمیں سدا پھر وہیں ہے رہنا
کیسا ہو گا منظر سارا
روح و تن یہ سوچ کے سارا
خوشی سے ہے معمور ہمارا
خوشی سے ہے معمور ہمارا

© 2010 Ansa Daniel

Comments  

 
0 #1 AlfonzoX 2017-09-25 18:56
I have noticed that your page needs some fresh posts. Writing manually takes a lot of time, but there is tool
for this time consuming task, search for; Wrastain's tools for content
Quote
 

Add comment


Security code
Refresh

Login Form